سکردو روڈ : پڑتی ہے آفت سکردو روڈ سے اٹھتی ہے دہشت سکردو روڈ سے

سکردو روڈ
پڑتی ہے آفت سکردو روڈ سے          /       اٹھتی ہے دہشت سکردو روڈ سے
ملتی ہے زحمت سکردو روڈ سے        /      اٹھ گئی رحمت سکردو روڈ سے
بچے اور نوجوان، بوڑھے کتنے ہی      /     کر گئے رحلت سکردو روڈ سے
خستہ حالت دیکھ کر روتے ہیں سب        /   ہے عیاں وحشت سکردو روڈ سے
چاہ ہے یہ موت کا تب پھیلتی                  /   ہے سدا دہشت سکردو روڈ سے
درجنوں اس کا ہوا ہے افتتاح                   / لوٹی ہے عزت سکردو روڈ سے
داد پاتے ہیں حکمراں قوم سے                / جوڑ کر نسبت سکردو روڈ سے
دستخط پر دستخط کر کر کے یہ              /   کرتے ہیں حرفَت سکردو روڈ سے
کس ڈھٹائی سے یہ باتیں کرتے ہیں!     /     چھین کر حرکت سکردو روڈ سے
پہلے کرتے ہیں سیاست اپنی پھر        /       پاتے ہیں شہرت سکردو روڈ سے
کیا غرض ہے روڈ سے، ان کو فقط    /        لینا ہے رشوت سکردو روڈ سے
کیوں بنائیں گے فری میں، کتنوں کی /         بنتی ہے ثروت سکردو روڈ سے
خوب ڈھاکہ مارتے ہیں قوم پر           /        کر کے یہ نسبت سکردو روڈ سے
چہروں پر اہلِ سیاست کے دبیز           /      چھاتی ہے ظلمت سکردو روڈ سے
اب دلانا ہے تمہیں مل کر انہیں             /     سخت سی عبرت سکردو روڈ سے
قوم نے اس پر سفر کرنا ہے                 /    ان کی ہے قوت سکردو روڈ سے
بس پہ چڑھتے ہی دلوں میں ہوتی ہے      /  ایک گھبراہٹ سکردو روڈ سے
کرنا ہے اب جان جوکھوں کا سفر            /  جا چکی ہے راحت سکردو روڈ سے
جڑ چکی ہے اہلِ بلتستان کی                 /   حاجت وغایت سکردو روڈ سے
ہے بچانا اب ضروری ظالمو!               /    ڈوبتی صنعت سکردو روڈ سے
آس اب بھی ہیں لگائے بیٹھے، سب    /     مرد اور عورت سکردو روڈ سے
نقشہء کشمیر دیکھا تو لگا              /      ملتی ہے صورت سکردو روڈ سے
یاسین سامیؔ، کویت
24.04.2017
GB NEWS ONE A NETWORK OF GILGIT BALTISTAN
x