ہمارا ستارہ


~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
ہمارا ستارہ 
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

چمکتا ہوا اک ستارہ
سویرے سویرے
نظر مجھ کو آیا
اکیلا تھا آکاش پر وہ
زمیں پر اکیلا تھا میں بھی
بہت صاف تھا آسماں بھی
بہت فاصلے درمیاں تھے
کبھی دیکھتا تھا میں اس کو
کبھی اپنی حالت
مگر سن!
چمک اس کی، نظروں میں میری پڑی جب
مجھے ایک احساس ہونے لگا تب
تپش تھی محبت کی کوئی
تھی اپنوں کی اپنائیت بھی
مگر میں
سمجھتا رہا وہم ہے میرا کوئی
ولیکن
ملی ہے خبر تیری موجودگی کی
تری چاہتوں کی
رفاقت کی تیری۔۔۔
مری جاں! بتا دو، سنا دو؟!
کہیں سے تُو بھی دیکھتا ہے؟!
اکیلا چمکتا دمکتا ستارہ
محبت کا تارا،ہمارا ستارہ

بروز منگل،11فروری 2014م، بوقت 32:1 بشب

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
~~~~~~~~ یاسین سامی ~~~~~~~~ 
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~