شہرِ مدینہ

******* شہرِ مدینہ *******
دلوں کا ہے محور وہ شہرِ مدینہ
ہے جنت کا منظر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
گلستاں معطر وہ شہرِ مدینہ
فضائے معنبر وہ شہرِ مدینہ
ٰٰ
گلیمِ ابو ذرؓ وہ شہرِ مدینہ
اخوت کا مظہر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
نہ سجنے سنورنے کی حاجت ہے مجھ کو
جبینوں کا زیور وہ شہرِ مدینہ
ٰ
گھٹا ٹوپ ظلمت ہے ہر سو جہاں میں
ہے شمسِ منور وہ شہرِ مدینہ
ٰ
ہدایت کا چشمہ، محبت کا دریا
سکوں کا سمندر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
ہے شرقا وغربا، شمالا جنوبا
اماں کا گھر ودر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
ہے مکہ زمرد تو اقصٰی زبرجد
ہے یاقوت وگوہر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
ہے جاں مومنوں کی مساجد ثلاثہ
حبیبِ پیمبر ﷺ وہ شہرِ مدینہ
ٰٰ
ابو بکرؓ وفاروقؓ وعثمانؓ وحیدرؓ
سبھی کا مقدر وہ شہرِ مدینہ
مذاہب کا منبع، مسالک کا مرجع
شریعت کا مصدر وہ شہرِ مدینہ
ٰ
ممالک کا قبلہ تو صوبوں کی چوٹی
ہے شہروں کا رہبر وہ شہرِ مدینہ
ٰٰٰ
ٰ
فی البدیہہ قافیہ پیمائی
احباب کی بصارتوں اور بصیرتوں کی نذر
ٰ
یاسین سامیؔ یوگوی
گلگت بلتستان۔پاکستان