بلتستان

بلتستان



بلتستان
Baltistan
Montage Gilgit-Baltistan.PNG
عمومی معلومات
ملکFlag of Pakistan.svg پاکستان
صوبہگلگت بلتستان
محل وقوع34.58 درجے شمال، 76.32 درجے مشرق
رقبہ10108
آبادی322000 بمطابق 2002ء
منطقۂ وقتمعیاری عالمی وقت +5
بلتستان is located in پاکستان
بلتستان
پاکستان میں بلتستان کا مقام
بلتستان (بلتی زبان میں' بلتیول') ایک قدیم ریاست ہے جو کھبی بلتی یل تبت خورد اور قبل مسیح میںپلو لو کے ناموں سے معروف تھی آج کل پاکستان کے صوبہ گلگت و بلتستان میں شامل ہے اگرچہ اس کے کچھ حصہ پر بھارت نے قبضہ کیا ہوا ہے۔ بلتستان میں دنیا کے تیس سے زیادہ اونچے ترین پہاڑ واقع ہیں جن میں کے۔ٹو شامل ہے۔ یہں قطبین کے بعد گلیشیئر کا سب سے بڑا زخیرہ بھی یہی موجود ہے جن میں سیاچن گلیشیر بلتورو گلیشیر اوربیافو گلیشیر مشہور ہیں۔ بلتستان کی سرحدیں چین اور بھارت سے ملتی ہیں۔ بلتستان پر 1848ء میں کشمیر کے ڈوگرہ سکھ حکمرانوں نے قبضہ کیا تھا۔ انگریزوں نے جو کشمیر ڈوگروں کو بیچا تھا اس میں گلگت و بلتستان شامل نہیں تھا مگر گلاب رائے کے صاحبزادے رنبیر سنگھ بادشاہ بنے تو ان کی افواج نے گلگت اور بلتستان کو فتح کرکے کشمیر کا حصہ بنا لیا۔[1] اس سے پہلے یہ ایک آزاد ریاست تھی۔ برصغیر کی تقسیم کے وقت بلتستان کے لوگوں نے اپنی جنگِ آزادی لڑی اور1948ء میں خود پاکستان میں شامل ہوئے ۔ اگرچہ بلتستان کی آئینی حیثیت کا تعین مسئلہ کشمیر کے مسئلے کے حل نہ ہونے کی وجہ سے ابھی تک نہیں ہوا اور نہ ہی انہیں ووٹ ڈالنے کا حق حاصل ہے۔ لیکن ستمبر 2009ء میں پاکستان کے صدر نے بلتستان و گلگت کو خودمختاری کے بل پر دستخط کر دیے جس کے بعد یہ علاقہ کشمیر کی طرح ایک پارلیمنٹ رکھ سکے گا۔ بلتستان کا تقریباً تمام علاقہ پہاڑی ہے جس کی اوسط اونچائی گیارہ ہزار فٹ ہے۔ لداخ بھی قدیم تاریخ سے بلتستان کا حصہ رہا ہے جو آج کل بھارت، چین اور پاکستانمیں تقسیم ہو چکا ہے۔ گلگت و ہنزہ بھی تاریخ کے مختلف ادوار میں بلتستان سے ملحق رہے ہیں۔ بلتستان کی غالب اکثریت شیعہ مسلمانوںپر مشتمل ہے جبکہ ایک بڑی تعداد میں نوربخشی مسلمان بھی آباد ہیں۔ سکردو بلتستان کا سب سے بڑا شہر اور دارالخلافہ ہے۔