حمد باری تعالی  ( از قلم : یاسین سامی )

حمد باری تعالی  ( از قلم : یاسین سامی )

مالکِ ارض وسما تو
صاحبِ جود سخا تو

ہادئ جنّ وبشر تو
منبعِ رشد وہدیٰ تو

سب ترے در کے سوالی
مامنِ شاہ وگدا تو

حمد ومدح وشرف تیرا
لائقِ فضل وثنا تو

روز وشب کا ہے مقلّب
موجدِ صبح ومسا تو

مُنزِلِ "والشّمس" بھی تو
ناشرِ نور وضیا تو

روشنی ہی روشنی ہے
معدنِ حسن وسَنا تو

اَدون واَدنیٰ خلائق
پیکرِ مجد وعلا تو

ہے نہاں "لا فرق" میں یہ
خالقِ سرخ وسیاہ تو

حکم ہے "خذ ما صفا" کا
مرجعِ صدق وصفا تو

لفظِ "اَلَّف" میں ہےپنہاں
مصدرِ مہر ووفا تو

اوس وخزرج بھی ملے تھے
مخزنِ ربط واِخا تو

حکمِ "لا تحزن" تھا اعلاں
رہبرِ ثور وحرا تو

سوچ سے عاری ہے ہر دل
واہبِ فکر وادا تو

بھوکے مرتے ہیں بہت، پَر
فالقِ حب ونویٰ تو؟!

ہر جگہ آہ وفغاں ہے
کاشفِ کرب وبلا تو؟

حمد سامیؔ کی تو سن لے
سامعِ صوت وندا تو